پنجاب کی طرح سندھ میں بھی گندم کی قیمت ایک ہزار 950 روپے فی من مقرر

ایسے میں کہ جب وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے دعویٰ کیا کہ دیگر صوبوں کے مقابلے میں سندھ میں گندم سب سے مہنگی ہے، سندھ کابینہ نے فیصلہ کیا ہے کہ 16 اکتوبر سے فلور ملز کو گندم ایک ہزار 950 روپے فی 40 من کے حساب سے جاری کی جائے گی۔

وزیراعلیٰ سید مراد علی شاہ نے صوبائی کابینہ کے اجلاس کی صدارت کی، انہوں نے کہا کہ ملک میں یکساں ریٹ کے تعین سے گندم کے آٹے کی قیمتیں مستحکم ہوں گی۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر ایک بیان میں کہا تھا کہ صوبائی حکومت نے 12 لاکھ ٹن گندم کا اجرا روک دیا ہے، جس سے قیمت بڑھ رہی ہے اور دعویٰ کیا کہ قیمت دیگر صوبوں کے مقابلے میں سندھ میں سب سے زیادہ ہے۔

انہوں نے صوبائی حکومت پر اناج کی خریداری نہ کرنے کا بھی الزام عائد کیا۔

تاہم صوبائی وزیر خوراک مکیش کمار چاولہ نے سندھ کابینہ کو بتایا کہ محکمہ خوراک کے گوداموں میں 12 لاکھ ٹن سے زائد گندم کا ذخیرہ دستیاب ہے، جہاں سے ہر سال 15 اکتوبر کو فلور ملز کو اجناس جاری کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت پنجاب حکومت20 ستمبر سے ایک ہزار 950 روپے فی من کے حساب سے گندم جاری کررہی ہے۔

کابینہ نے 16 اکتوبر سے گندم ایک ہزار 950 روپے فی من کے حساب سے جاری کرنے کی منظوری دی اور وزیر اعلیٰ نے کہا کہ ملک میں گندم کے یکساں نرخ آٹے کی قیمتوں کو مستحکم کریں گے۔