Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 01 جون 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

ایس او پیز پر عمل نہیں ہورہا دوبارہ سخت لاک ڈاؤن کردینگے،وزیراعلیٰ سندھ

ویب ڈیسک بدھ 13 مئی 2020
ایس او پیز پر عمل نہیں ہورہا دوبارہ سخت لاک ڈاؤن کردینگے،وزیراعلیٰ سندھ

کراچی ( قومی اخبار نیوز)کراچی سمیت سندھ بھر میں لاک ڈاؤن میں نرمی کیے جانے کے بعد بازاروں میں بے پناہ رش اور ایس او پیز پر عمل درآمد نہ کیے جانے کا سندھ حکومت نے سختی سے نوٹس لے لیا ہے اور وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سمیت کابینہ کے ارکان اس صورتحال میں سخت تشویش کا شکار ہوگئے ہیں کیونکہ تاجروں سمیت عوام الناس کی جانب سے ایس او پیز پر عمل نہیں کیا جارہا اور ایسی صورت میں کورونا کے پھیلاؤ میں تیزی آنے کے خطرات بڑھ گئے ہیں اس حوالے سے وزیراعلیٰ مراد علی شاہ نے دوبارہ لاک ڈاؤن کے حوالے سے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ گزشتہ روز لاک ڈاؤن کی ایس او پیز پر کسی نے عمل نہیں کیا، ایسا طریقہ کار نہ اپنایا جائے کہ حکومت کو دوبارہ سختی کرنا پڑے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگر یہی صورتحال رہی تو دوبارہ سخت لاک ڈاؤن کرنا پڑے گا۔ وزیراعلیٰ سندھ نے صوبے بھر میں کورونا وائرس کی صورتحال سے متعلق بیان دیتے ہوئے بتایا کہ اس وبا کے 77ویں یوم 18 اموات ہوئی ہیں جو ملک بھر میں سب سے زیادہ ہیں۔انہوں نے کہا کہ عوام ایس او پیز پر عمل نہیں کررہے جس کی وجہ سے کیسز بڑھ رہے ہیں بالخصوص بازار کھولے جانے کے بعد بہت زیادہ لاپروائی کا مظاہرہ کیا جارہا ہے جس کا نوٹس لے رہے ہیں۔وزیر اعلٰی سندھ مراد علی شاہ نے کہا کہ لاک ڈاؤن کی ایس او پیز پر کسی نے عمل نہیں کیا، ایسا طریقہ کار نہ اپنایا جائے کہ حکومت کو دوبارہ سختی کرنا پڑے۔مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران سندھ میں کْل 4064 ٹیسٹ ہوئے، 593 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ اب تک 99117 ٹیسٹ میں 12610 مثبت آئے ہیں، اس وقت 10163 مریض زیر علاج ہیں، 8668 مریض گھروں، 915 آئسولیشن مراکز اور 580 اسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ اسپتالوں میں موجود 82 مریضوں کی حالت تشویشناک ہے جبکہ 27 وینٹی لیٹرز پر ہیں۔کراچی کی صورتحال سے آگاہ کرتے ہوئے مراد علی شاہ نے بتایا کہ شہر قائد میں 412 نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، ضلع جنوبی میں 124، ضلع شرقی میں 92 اور ضلع وسطی میں 63، کورنگی میں 51، ضلع غربی میں 45 اور ملیر میں 37 مزید نئے کیسز سامنے آئے۔سندھ کے دیگر بڑے شہروں کے حوالے سے مراد علی شاہ نے بتایا کہ جیکب آباد میں 41، حیدرآباد میں 24، گھوٹکی میں 22 اور سکھر میں 9، ٹنڈوالہیار میں 4، لاڑکانہ میں 3، ٹنڈو محمد خان اور خیرپور میں 2-2 نئے کیسز ظاہر ہوئے ہیں۔دریں اثنا حکومت سندھ کے ترجمان مرتضٰی وہاب نے بھی اپنی پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ سندھ حکومت نے کورونا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے جو موثر اقدامات کیے ان کی وجہ سے ہی صوبے میں کیسز کو روکا جاسکا ہے تاہم لاک ڈاؤن میں نرمی کرنے کے بعد عوام نے احتیاطی تدابیر اختیار کرنا چھوڑ دی ہیں اور بازاروں و مارکیٹوں میں بے احتیاطی سے کیسز اگر بڑھ گئے تو حکومت دوبارہ سخت لاک ڈاؤن پر عمل کرائے گی کیونکہ سندھ حکومت کے لیے انسانی جانوں سے بڑھ کر کچھ نہیں۔

(157 بار دیکھا گیا)

تبصرے