Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
جمعرات 24 اکتوبر 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

کراچی کو بچانے کیلئے فوج آگئی

قومی نیوز بدھ 31 جولائی 2019
کراچی کو بچانے کیلئے فوج آگئی

کراچی (قومی اخبارنیوز) شہر میں ہونے والی موسلا دھار بارش نے شہری نظام زندگی درہم برہم کردیا ہے۔ گڈاپ ٹاﺅن کے 34 گوٹھ‘سعدی گارڈنز‘رئیس امروہی سوسائٹی‘ کے الیکٹرک ہاﺅسنگ سوسائٹی‘ خدا کی بستی‘ یوسف گوٹھ‘ شادمان ٹاﺅن‘ سعدی ٹاﺅن‘ سخی حسن قبرستان‘ اورنگی ٹاﺅن کی 5 آبادیاں‘ ملیر کی 6 آبادیاں پانی میں ڈوب گئیں

سپرہائی وے کا ایک حصہ اور ناردرن بائی پاس پر درجنوں پل پانی میں بہہ گئے، کراچی سے بلوچستان اور کراچی سے حیدرآباد کا زمینی راستہ منقطع ہوگیا

لاکھوں مکینوں نے رات جاگ کر گزاری‘ سیلاب زدہ علاقوں میں ایمرجنسی سائرن بجائے گئے‘ مساجد میں اذانیں دی گئیں‘ سندھ حکومت اوربلدیاتی اداروں کی ناکامی کے بعد شہر کو بچانے کے لئے پاک فوج میدان میں آگئی۔

شہر میں کشتیاں چل گئیں‘ 12 آبادیوں سے نقل مکانی شروع‘ کورنگی کازوے بھی پانی سے بہہ گیا‘ ایک درجن سڑکیں زمین میں دھنس گئیں‘ 2 روز گزرنے کے باوجود ٹرینوں کا سسٹم درہم برہم ہے

یہ بھی پڑھیں : قبرستانوں میں بھی پانی جمع،کئی قبریں دھنس گئیں

اندرون ممالک جانے والے مسافروں کو شدید پریشانی ہے‘ کرنٹ لگنے سے 2 دوستوں سمیت مزید 12 افراد ہلاک ہوگئے۔ شہر میں 172 ملی میٹر بارش برسانے والا سسٹم سمندر کی طرف چلا گیا

نیو سبزی منڈی اور اولڈ سٹی ایریا کی 200 مارکیٹوں میں سیلابی کیفیت ہے تاجروں کا اربوں روپے کا نقصان ہوگیا‘ مختلف علاقوں میں 16 افراد پانی کے ریلے میں بہہ گئے۔

آج صبح بلوچستان کے علاقے لسبیلہ وندر کے قریب بارشوں کے باعث سیلاب سے متاثرہ وندر میرا ںپیردرگاہ جمعہ گوٹھ 2 دن سے محصور‘ خواتین ‘بچوں اور بزرگ سمیت 25 افراد کو سعد ایدھی کی نگرانی میں ایدھی شعبہ بحری خدمت نے محفوظ مقام پر منتقل کیا

منگل کے روز لٹھ ڈیم اور تھدو ڈیم ڈوبنے سے گڈاپ ٹاﺅن کے 32 گوٹھ ڈوب گئے‘ جبکہ سپرہائی وے M.9 پر بھی سیلابی ریلہ داخل ہونے سے سپرہائی وے کا ایک ٹریک پانی میں بہہ گیا جس کے باعث کراچی اور حیدرآباد کا زمینی راستہ منقطع ہوگیا۔

یہ بھی پڑھیں : کراچی ہشت آب ہوگیا 8 دریا دریافت

سیلابی ریلہ سعدی گارڈن کے نالے میں داخل ہوا‘ نالے میں طغیانی آگئی جس کے باعث سعدی گارڈنز‘ رئیس امروہی سوسائٹی‘ کے ڈی اے سوسائٹی‘ کے الیکٹرک سوسائٹی زیر آب آگئی۔

علاقے میں محصور افراد کو محفوظ مقام پر منتقل کرنے کے لئے پاک فوج کی امدادی ٹیمیں اور ایدھی شعبہ بحری خدمت پہنچ گئی‘ کشتیوں کے ذریعے مکینوں کو محفوظ مقام پر منتقل کیا گیا

علاقے سے ہزاروں افراد نے نقل مکانی کردی‘ سیلابی ریلے سے کے الیکٹرک کے ڈی اے گرڈ اسٹیشن کو بچانے کے لئے پاک فوج کی ریسکیو ٹیموں نے ہنگامی آپریشن کیا۔

آج صبح تک پاک فوج کا انجینئرنگ کور ہیوی مشےنری کے ذریعے گرڈ اسٹیشن سے پانی کی نکاسی کررہا تھا اور ریت کی بوریوں کے ذریعے پانی کو روک رہا تھا

پاک فوج کی ٹیمیں رات بھر امدادی کاموں میں مصروف تھی‘ اس موقع پر شہریوں نے پاک فوج زندہ باد کے نعرے لگائے۔

یہ بھی پڑھیں : کے الیکٹرک سپریم کورٹ کو بھی بجلی فراہمی میں ناکام

آج صبح سیلابی ریلہ سعدی ٹاﺅن میں بھی داخل ہوگیا تھا‘ سعدی ٹاﺅن کے بلاک 5 میں سیلابی ریلہ داخل ہوگیا تھا‘ رات بھر ایمرجنسی سائرن بجائے گئے اور اذانین دی گئیں۔

سرجانی خدا کی بستی‘ یوسف گوٹھ میں بھی سیلابی پانی میں گھر ڈوبنے کے بعد شہریوں نے گھروں کی چھتوں پر پناہ لی۔

آج صبح شہر میں اسکولوں میں طلباءکی حاضری کم تھی جبکہ اسکولوں کے اطراف میں پانی اسکولوں کے اندر بھر جانے کے باعث متعدد اسکولوں میں آج چھٹی کردی گئی تھی۔

یہ بھی پڑھیں : بارش کا سلسلہ شروع ، ہنگامی حالت نافذ

محکمہ موسمیات کے مطابق خلیج بنگال سے آنے والا سسٹم سمندر کی طرف نکل گیا ہے‘ اب شہر میں بارش کا امکان نہیں‘ تاہم آج ہلکی بوندا باندی ہوسکتی ہے

شہر میں 2 روز کے دوران سب سے زیادہ بارش سرجانی میں 173 ملی میٹر اور سب سے کم بارش کیماڑی میں 31 ملی میٹر ریکارڈ کی گئی۔

جبکہ شہر قائدمیں دوسرے روز بھی موسلادھار بارش کے دوران کرنٹ لگنے کے واقعات میں کمسن بچی اور 2 دوستوں سمیت 12افراد جاں بحق ہو گئے ،2 روز کے دوران کرنٹ لگنے کے واقعات کے دوران جاں بحق ہونے والے افراد کی تعداد27 ہوگئی ہے۔

(264 بار دیکھا گیا)

تبصرے