Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 19  اگست 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

تھانوں کی تعداد کم کی جائے گی،کراچی پولیس چیف

ویب ڈیسک جمعه 19 جولائی 2019
تھانوں کی تعداد کم کی جائے گی،کراچی پولیس چیف

کراچی…کراچی پولیس چیف غلام نبی میمن کی زیر صدارت کلفٹن لائسنس برانچ‘ سلیم واحدی آڈیٹوریم میں ایک تعارفی اجلاس منعقد کیا گیا جس میں کرائم رپورٹرز، الیکٹرانک و پرنٹ میڈیا کے نمائندوں نے شرکت کی۔

کراچی پولیس چیف غلام نبی میمن نے صحافیوں سے خطاب کے دوران اہم اعلانات کئے۔عوام کو بہتر سیکورٹی فراہم کرنے کے لئے شہر کے چھوٹے تھانوں کو بڑے تھانوں میں تبدیل کیا جائے گا کیونکہ زیادہ تھانے ہونے کی وجہ سے پولیس کی نفری کم ہوجاتی ہے جس کی وجہ سے علاقہ مکین کی شکایات کا بروقت ازالہ دشوار ہو جاتا ہے جبکہ ایس ایچ او کے لئے بھی پندرہ بیس اہلکار سے علاقے میں امن و امان قائم کرنا مشکل ہو جاتاہے۔

ایسے افسران ایس ایچ اوز کے اہل ہوں گے جو عوام دوست ہوں اور عوام کے ساتھ دوستانہ رویہ قائم کر سکیں اور جو عوام سمیت دیگر معاملات کو احسن طریقے سے حل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہوں‘ شہر میں 3نئے ماڈل تھانے بنائے جائیں گے اور اچھے افسران کو بھاری نفری کے ساتھ تعینات کیا جائے گا‘ ان ماڈل تھانوں میں عوام کے لئے بہترین اور بروقت خدمات پیش کی جائیں گی اور لوگ بلا خوف و خطر ان تھانوں میں اپنی شکایات لے کر آسکیں گے۔

3 ماڈل تھانوں کو 3ضلعوں میں بنایا جائے گا اوراگر تجربہ کامیاب ہوا تو حکومت کو دکھائیں گے کہ کراچی میں پینتالیس پچاس سے زائد تھانے نہیں ہونے چاہئیں۔شعبہ تفتیش کو بھی منظم کریں گے اور انھیں مراعات دیں گے تاکہ عوام سے کسی قسم کا تقاضا نہ کر سکیں‘اس کاپروپوزل آئی جی اور حکومت کوبھیجوں گا۔

یہ بھی پڑھیں : بھارت‘ ایک اور مسلمان ہجوم کی بھینٹ چڑھ گیا

کراچی میں مسئلہ یہ ہے کہ 10 ہزار کے قریب کرمنلز کا (رپیٹ) گروہ ہے وہی وارداتیں کرتا رہتا گرفتار ہوتے ہیں اور ضمانت پر باہر آکر دوبارہ وارداتیں کرتے ہیں‘ دنیا میں کرمنلز جسٹس سسٹم چل رہا اور ہمارا سسٹم رکا ہوا ہے۔عوام تھانوں میں بلا رکاوٹ اپنی ایف آئی آر درج کروا سکیں گے‘ ان کو کوئی بھی منع نہیں کرے گا۔

ایف آئی آر سے اگر کرائم بڑھتا ہے تو بے شک لیکن ایف آئی آر ہوگی‘ رجسٹریشن نمبر بڑھنے سے اگر یہ دکھایا جائے کہ کرائم بڑھ گیا ہے تو یہ غلط ہوگا۔ہمارا فرض بنتا ہے کہ ایف آئی آر رجسٹرڈ کرکے اس پر بہتر تفتیش کی جائے۔پولیس کرپشن سے متعلق پالیسی واضح کردی ہے۔کرپشن میں ملوث افسران و ملازمین کے خلاف سینئر افسران فوری کارروائی کریں گے۔

نمبر پلیٹس سے متعلق تشہیری مہم چلا رہے ہیں۔ جرائم پیشہ افراد جعلی نمبر پلیٹس کا استعمال کرتے ہیں‘ پولیس چیکنگ پر کوشش ہوگی کہ کیمرہ ہو‘ تاکہ عوام کو شکایت نہ ہو۔سینئر پولیس افسران بھی خود چیکنگ پر موجود ہوں گے اور کوشش کریں گے کہ پبلک کو ساتھ ملائیں تاکہ لوگوں کا اعتماد بحال ہو سکے‘قانون چھوٹے بڑوں کیلئے برابر ہوگا جس کی پابندی سب پر لازم ہے۔

(405 بار دیکھا گیا)

تبصرے