Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
بدھ 13 نومبر 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

متحدہ ،پی ٹی آئی اتحاد خطرے میں پڑگیا

صابر علی اتوار 26 مئی 2019
متحدہ ،پی ٹی آئی اتحاد خطرے میں پڑگیا

کراچی… وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے سندھ میں نیا انتظامی یونٹ نہ بنائے جانے کے واضح اعلان کے بعد ایم کیوایم (پاکستان) کا پی ٹی آئی حکومت سے اتحاد خطرے میں پڑ گیا

وزیر اعظم عمران خان کے سندھ میں نیا انتظامی یونٹ نہ بنائے جانے کاواضح موقف اختیار پر ایم کیوایم (پاکستان)اور جی ڈی اے میں شامل رہنمائوں کے دبائو پر سندھ میں انتظامی یونٹ نہ بنائے جانے کا واضح اعلان کرنے پر مجبور ہوئے

تاہم سندھ کے شہری علاقوں کے اردو بولنے والے عوام اور کارکنوں کے دبائوکے بعد ایم کیوایم (پاکستان) کے رہنمائوں نے ا س حوالے سے اپنی خاموشی توڑ دی ہے‘ ایم کیوایم (پاکستان) کے سینئر ڈپٹی کنوینر عامر خان نے حیدرآباد میں منعقدہ افطار ڈنر میں کہا کہ پورے پاکستان میں نئے صوبے نہ بنائے جائیں بلکہ وہاںبھی نیا بلدیاتی نظام لایا جائے

عامرخان نے کہا کہ ہم سندھ کی تقسیم نہیں چاہتے ‘ لیکن سندھ کی ترقی کیلئے نئے انتظامی یونٹس ضروری ہیں‘ انہوںنے کہا کہ ہم بھی سندھ کے باسی رہنے والے ہیں‘ کیاہمار ے جذبات کا احساس کسی کونہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیں : ایم کیو ایم پر سیاسی حلقے حیران

عامر خان کے اس واضح موقف کے بعد اس بات کا امکان ہے کہ ایم کیوایم (پاکستان) کا پی ٹی آئی حکومت سے اتحاد زیادہ دن نہیں چل سکے گااور ایم کیوایم(پاکستان) کو اس حوالے سے واضح اعلان اور حکومت سے اتحاد پر نظر ثانی کرنا ہوگی

ذرائع کے مطابق ایم کیوایم (پاکستان) اس حوالے سے عید کے بعد بڑا فیصلہ کرسکتی ہے‘ ایم کیو ایم (پاکستان) پر وزیر اعظم عمران خان کے اس اعلان پر کارکنوں کا بہت زیادہ دبائوہے کہ حکومت سے علیحدگی اختیار کی جائے۔

ترجمان ایم کیوایم پاکستان کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ سندھ میں نئے صوبے سے متعلق سیاسی جماعتوں سے رابطے اور ہر قانونی راستہ اختیار کیا جائے گا۔

وزیراعظم عمران خان کے سندھ میں نئے صوبے کی حمایت نہ کرنے کے بیان پر ترجمان ایم کیوایم کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ وزیراعظم کا سندھ میں نئے صوبے سے متعلق مؤقف ان کی جماعت کی رائے ہوسکتی ہے

ایم کیوایم سمجھتی ہے سندھ میں نئے صوبے کے قیام کیلئے آگے بڑھا جائے، نئے صوبے سے متعلق سیاسی جماعتوں سے رابطے اور ہر قانونی راستہ اختیار کیا جائے گا۔

(301 بار دیکھا گیا)

تبصرے