Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 25 مارچ 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

پاکستانی فنکاروں کا مودی سرکار کیخلاف مورچہ

ویب ڈیسک اتوار 03 مارچ 2019
پاکستانی فنکاروں کا مودی  سرکار کیخلاف مورچہ

بھارتی طیاروں کی پاکستانی سرحدوں کی خلاف ورزی پر پاکستانی فنکاروں نے شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان کی مسلح افواج کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کیا ہے۔ اداکارہ و ہدایت کارہ ریما خان نے کہا ہے کہ بھارت خطے میں جنگی جنون پیدا کر رہا ہے۔ جنگ کسی مسئلے کا حل نہیں۔ بھارت نے لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کرکے بہت بڑا جرم کیا ہے۔ بھارت کسی غلط فہمی میں نہ رہے۔ اداکارہ میرا نے کہا کہ نریندر مودی ہوش کے ناخن لے اور جارحیت سے باز رہے۔ شاہدہ منی نے کہا ہے کہ بھارت نے روز اول سے ہی پاکستان کو تسلیم نہیں کیا، بھارت ہمارا دوست نہیں ہو سکتا۔ پاکستان فلم ڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین چودھری اعجاز کامران نے کہا ہے کہ پاکستان کو بھارتی جارحیت کا منہ توڑ دینا چاہئے۔

بھارتی فلموں کی نمائش پر پابندی ایک احسن فیصلہ ہے یہ مستقل ہونا چاہئے۔ آئی این پی کے مطابق ہمایوں سعید، فیصل قریشی، عمران عباس، مہوش حیات، ہانیہ عامر، ماورا حسین و دیگر نے کہا ہے کہ پلوامہ واقعہ کو بنیاد بناکر بھارت نے وطن عزیز کے خلاف کسی قسم کی جارحیت کی کوشش کی تو فنکار بائیس کروڑ عوام کی طرح پاک فوج کے شانہ بشانہ ہوں گے۔دوسری جانب پاکستان کی فنکار برادری نے بھی بھارتی جارحیت کی مذمت کرتے ہوئے پاک فوج کے ساتھ کھڑا ہونے کا اعلان کرتے ہوئے بھارتی فلموں کی نمائش بند پر باضابطہ پابندی لگانے کے عمل کو احسن اقدام قرار دیدیا۔ اس ضمن میں پاکستان کی فلم انڈسٹری کے ممتاز اداکار مصطفی قریشی نے کہا ہے کہ بھارتی جارحیت کی فنکار برادری پرزور مذمت کرتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پوری قوم اس وقت پاک فوج کیساتھ ہے۔ بھارت نے پاکستان کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی تو اسے منہ کی کھانا پڑے گی۔ مصطفی قریشی نے کہا کہ میں عرصہ دراز سے پاکستان میں بھارتی فلموں کی نمائش بند کرنے کا مطالبہ کررہا تھا کیونکہ بھارتی فلموں کے ذریعے ہمارا بھاری زرمبادلہ بھارت جارہا تھا۔اب خوشی کی بات ہے کہ پاکستانی حکومت نے بھارتی فلموں پر باضابطہ پابندی لگادی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کی مودی حکومت کا چہرہ دنیا بھر کے سامنے بے نقاب ہوگیا ہے۔ انہوں نے اس موقع پر پاکستانی سیاست دانوں سے بھی کہا کہ وہ موجودہ نازک وقت میں آپس کے اختلاف بھلا کر ایک پلیٹ فارم پر آجائیں اور دشمن کو بتادیں کہ تمام پاکستانی بھارتی جارحیت کے خلاف متحد ہیں۔ انہوں نے بھارت میں رہنے والے ان فنکاروں کو بھی خراج تحسین پیش کیا جنہوں نے بھارتی حکومت کے عزائم کی کھل کر مخالفت کی ہے اور پاکستان کے مؤقف کو درست کہا ہے۔ مصطفی قریشی نے کہا کہ فنکار برادری کا ایک وفد جلد ہی وزیراعظم اور آرمی چیف سے ملاقات کرکے انہیں اپنی خدمات پیش کرنے کے حوالے سے یقین دہانی کرائے گا۔

علی ظفر عمران کے فین ہوگئے

پاکستان کے ساتھ انڈیا کی کسی بھی طرح کی چھیڑ چھاڑ بالی ووڈ میں ہلچل پیدا کر دیتی ہے۔ دونوں ملکوں کے درمیان حالیہ کشیدگی نے ایک بار پھر بالی ووڈ میں بی جے پی کے پرستاروں کو منھ کھولنے کا موقع دیا ہے۔دراصل پاکستانی اداکار اور گلوکار علی ظفر نے پلوامہ حملے کے بعد پاکستانی وزیراعظم عمران خان کی تقریر کی ٹوئٹر پر تعریف کر ڈالی کہ ’واہ کیا تقریر کی ہے‘ اور یہ بات اداکار پریش راول کو ذرا پسند نہ آئی۔انھوں نے آؤ دیکھا نہ تاؤ اور علی ظفر کو لتاڑ ڈالا۔ پریش روال علجت میں شاید یہ بھول گئے کہ علی ظفر انڈین نہیں پاکستانی ہیں اور ان کے وزیر اعظم نریندر مودی نہیں عمران خان ہیں۔ویسے پریش راول کی اس بیوقوفی کا جواب اجے دیوگن نے بلکل درست انداز میں دیا۔ میڈیا کے ساتھ بات چیت میں جب اجے دیوگن سے علی ظفر کی اس ٹوئیٹ کے بارے میں پوچھا گیا تو اجے دیوگن نے کہا کہ علی پاکستانی ہیں تو ظاہر ہیں وہ اپنے وطن کا ہی ساتھ دیں گے، جس طرح ہم اپنے ملک کے ساتھ ہوتے ہیں اس میں کوئی برائی نہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہر انسان اپنے ملک اور قوم کا ساتھ دیتا ہے اور انہیں علی کی ٹوئیٹ میں کوئی برائی نظر نہیں آئی۔اور جب یہی سوال گلوکار سونو نگم سے پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ اگر مودی جی اس طرح کا بیان پاکستان کے بارے میں دیتے تو میں بھی اسی طرح ان کی حمایت کرتا جس طرح علی نے اپنے وزیر اعظم کے بیان کی حمایت کی۔ علی ظفر ایک پاکستانی ہونے کے ناطے اپنا فرض نبھا رہے ہیں۔بالی ووڈ میں انوپم کھیر اور پریش راول کے علاوہ اور بھی بڑی شخصیات ہیں جو اس جنگ و جدل کے نعروں سے بے خبر نہیں تو بے پرواہ ضرور ہیں

(122 بار دیکھا گیا)

تبصرے