Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
بدھ 03 جون 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

ملیر میں 3 منزلہ عمارت گر گئی متعدد ہلاک

راؤ عمران اشفاق پیر 25 فروری 2019
ملیر میں 3 منزلہ عمارت گر گئی متعدد ہلاک

کراچی … آج صبح ملیر جعفر طیار سوسائٹی میں 3 منزلہ عمارت زور دار دھماکے سے زمین بوس ہوگئی‘ عمارت میں 4 فیملیاں رہائش پذیر تھیں
خاتون سمیت 3 زخمیوں کو ملبے تلے سے نکال لیا گیا‘ 12 افراد ملبے کے نیچے دبئے ہوئے تھے‘ تنگ گلیوں کی وجہ سے امدادی کاموں میں مشکلات کا سامنا ہے۔
آج صبح ملیر جعفر طیار سوسائٹی موڑ پر عملدار مسجد کے قریب 3 منزلہ عمارت زور دار دھماکے سے زمین بوس ہوگئی۔
عینی شاہدین کے مطابق آج صبح 7 بجے جب بچے اسکول جانے کے لئے گھروں سے نکل رہے تھے عمارت میں دراڑ پڑی اور مٹی جھڑنا شروع ہوگئی ارو دیکھتے ہی دیکھتے عمارت زمین بوس ہوگئی جس کے بعد علاقے میں چیخ و پکار مچ گئی‘ لوگ سوتے سے اُٹھ کر گھروں سے باہر نکل آئے۔
مکینوں کے مطابق عمارت گرائونڈ2پلس 2 فلور پر مشتمل تھی‘ عمارت میں 4 پورشن بنے ہوئی تھے‘ پنجتن پاک عمارت میں 6 خاندان مقیم تھے جبک علاقے میں تعمیرات کا کام بھی جاری تھا‘ 4 سے 5 روز قبل عمارت کے برابر والے مکان میں بلڈر کے لئے کھدائی ہوئی تھی
جس کی وجہ سے عمارت ایک طرف جھک گئی تھی لیکن مکینوں نے کوئی توجہ نہیں دی تھی۔ علاقے میں بلند عمارتوں کی تعمیرات پر پابندی تھی لیکن ایس بی سی اے کے علاقائی انسپکٹر اور افسران بھاری رشوت کے عوض تعمیرات کی اجازت دے رہے تھے۔
یہ خبر بھی پڑھیں : کورنگی میں عمارت گرگئی، تین افراد ہلاک
علاقے میں بڑے پیمانے پر ناجائز تعمیرات ہورہی تھیں‘ آج صبح عمارت سے جمی نامی شخص سمیت 2 افراد کی نعشیں اور 2 زخمیوں کو نکال لیا گیا تھا‘ 2 بچوں اور خواتین سمیت 12 افراد ملبے تلے دبے حوئے تھے‘ ملبے کے نیچے دبے افراد مدد کے لئے پکار رہے تھے‘ ایدھی اور چھیپا ویلفیئر کے رضاکار گرینڈر کی مدد سے ملبے کو کاٹ کر زخمیوں کو نکالنے کی کوشش کررہے تھے جبکہ 2 گھنٹے بعد آج صبح 9 بجے ہیوی مشینری موقع پر پہنچنے میں کامیاب ہوگئی‘ علاقے میں ہزاروں افراد موجود تھے‘ موقع پر موجود خواتین افسوسناک واقعہ پر ماتم کررہی تھیں۔
پولیس کے مطابق 100 گز پر واقع پنجتن پاک عمارت کا مالک جمی نامی شخص فی الفور نہیں معلوم ہوسکا تھا۔ علاقہ مکینوں نے بتایا کہ عمارت میں 26 افراد مقیم تھے‘ تاہم 12 افراد ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔
وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے عمارت گرنے کا نوٹس لیتے ہوئے کمشنر کراچی کو جائے وقوعہ پر پہنچ کر امدادی کاموں میں مصروف رہنے کی ہدایت کئے تھے۔
یہ خبر بھی پڑھیں : درجنوں غیر قانونی عمارتیں گرانے کی تیاری
عینی شاہدین نے بتایا کہ عمارت کا مالک جمی سانحے میں ملبے کے نیچے دب کر ہلاک ہوگیا ہے۔
صبح ساڑھے 7 بجے اسکول وین بچوں کو لینے بلڈنگ میں آئی تھی‘ وین ڈرائیور اُتر کر بلڈنگ سے بچے کو لے رہا تھا کہ عمارت گرگئی۔
عینی شاہدین نے بتایا کہ ملبے کے نیچے اسکول وین بھی دبی ہوئی ہے۔
عینی شاہدین کے مطابق عمارت کا مالک جمی برابر والے پلاٹ پر دوسری عمارت بنانے کے لئے کھدائی کروارہا تھا جس کی وجہ سے عمارت زمین بوس ہوئی۔
آخری اطلاعات تک ملبے تلے دبے لوگوں کو نکالنے کی کوشش کی جارہی تھی‘ ایدھی فائونڈیشن کے سعد ایدھی موقع پر پہنچ گئے تھے جبکہ چھیپا ویلفیئر کے سربراہ رمضان چھیپا امدادی کاموں کی نگرانی کررہے تھے۔

(628 بار دیکھا گیا)

تبصرے