Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
بدھ 20 فروری 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News | Best Urdu Website in World

فلم اندسٹری کے بہتر ہوئے ہیں حالات

ویب ڈیسک هفته 09 فروری 2019
فلم اندسٹری کے بہتر ہوئے ہیں حالات

ماڈل و اداکارہ مہوش حیات فلمسازوں اور ٹی وی ڈرامہ پروڈیوسر ز کے بعد اب فیشن ڈیزائنرز کی بھی اولین ترجیحات میں شامل ہوگئیں۔ مہوش کا کہنا ہے کہ ڈرامہ کے شیڈول سے فارغ ہوکر اب ہدایتکار وجاہت رؤ ف کی فلم ’’کراچی سے آگے کا پارٹ تھری‘‘ میں مرکزی کردار کررہی ہوں،فیشن ڈیزائنرز کے ملبوسات کی تشہیری مہم کیلئے وقت نکالنے کی کوشش کررہی ہوں۔ فنکاروں کو چوائس مل رہی ہے‘وقت سے ہر فنکار کو فیض اٹھانا چاہئے ، لیکن کارکردگی کے ساتھ تاکہ کام کا معیار بلند رہے۔ اداکارہ کا کہنا تھا کہ آج کل ٹی وی فنکاروں کا فلموں میں کام کرنے کا رجحان بڑھتا جارہا ہے‘ فلم ’’پنجاب نہیں جاؤں گی‘‘ کی مقبولیت نے پاکستانی فنکاروں کو بھی دنیا بھر میں متعارف کرادیا ہے ‘ اب بھی کئی نئی فلموں کی آفرز موجود ہیں لیکن اچھا کردار و جاندار اسکرپٹ میری ترجیح ہے۔ مہوش حیات کا کہنا تھاکہ نامعلوم افراد ، ایکٹران لا ،جوانی پھرنہیں آنی اور پنجاب نہیں جائوں گی ‘کی کامیابیوں نے مجھے نیا حوصلہ دیا ہے۔اداکارہ نے کہا کہ شوبز کے مختلف شعبوں میں کام کرتے ہوئے ہمیشہ ہی سیکھنے کا عمل جاری رہتا ہے لیکن فلم میں کام کرتے ہوئے بہت سیکھا اور خصوصاً بالی وڈ کے وراسٹائل اداکار Om Puri نے بہت رہنمائی کی‘وہ ایک منجھے ہوئے اداکار اور بہترین انسان ہیں‘ ان جیسے فنکار صدیوں میں پیدا ہوتے ہیں۔ مہوش حیات نے کہا کہ شوبز میں سب سے اہم اور پبلک کے قریب ترین میڈیم فلم کو ہی مانا جاتا ہے اور یہ حقیقت بھی ہے‘ فلم بینوں کی بڑی تعداد اچھی اور معیاری فلمیں دیکھ کر جہاں خوب انٹرٹینمنٹ ہوتے ہیں، وہیں وہ 2 سے 3 گھنٹے کے دوران سینما ہال میں بیٹھ کر بہت کچھ سوچنے پر مجبور بھی ہوتے ہیں‘ ان کو معاشرے کی برائیاں دکھائی دینے کے ساتھ ساتھ ان کا حل بھی نظر آتا ہے‘ اگر دیکھا جائے تو فنون لطیفہ کے تمام شعبوں کا کام لوگوں میں شعور اجاگر کرنا ہے، اس سلسلہ میں فلم سے بہتر میڈیم کوئی دوسرا نہیں۔ ایک سوال کے جواب میں مہوش حیات نے کہا کہ ایکٹنگ، ماڈلنگ اور میزبانی کے بعد اب گلوکاری کے میدان میں بھی قدم رکھ دیا ہے۔ گلوکاری کے شعبے میں اچھا رسپانس مل رہا ہے‘ سوشل میڈیا پر دنیا بھر کے لوگوں نے میری آواز کو پسند کیا ہے بلکہ بہت سے لوگوں نے تو یہ بھی کہا ہے کہ مجھے میوزک کو مستقل طور پر اپنا کیریئر بنا لینا چاہیے‘ اس بارے میں کچھ سوچا نہیں ہے‘ اس کا فیصلہ آنے والا وقت کرے گا۔ مہوش حیات نے مزید کہا کہ مشکل وقت میں سینما مالکان اپنی فلموں کو بھرپور سپورٹ کریں اور ہمیں معیار کو بہتر بنا کر مقابلے کی دوڑ میں شامل ہونا چاہیے۔ اداکارہ نے کہا کہ پاکستانی سرمایہ کاروں کی جانب سے فلموں پر بڑی سرمایہ کاری کی جاتی ہے‘ پاکستانی شائقین کو چاہیے کہ وہ اپنی فلموں کو پذیرائی دیں تاکہ ہماری انڈسٹری کو مضبوط بنیادیں میسر آسکیں۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہمیں تسلسل کے ساتھ معیاری فلمیں بنا کر مقابلے کی دوڑ میں شامل ہو کر بھارت کی فلم انڈسٹری کو پیچھے چھوڑنے کی جدوجہد کرنی چاہیے۔

(68 بار دیکھا گیا)

تبصرے