Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 17 جون 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

اپنے وقت پر اچھا لگتا ہے ہر کام،سعدیہ امام

اصم رحمانی اتوار 13 جنوری 2019
اپنے وقت پر اچھا لگتا ہے ہر کام،سعدیہ امام

اداکارہ سعدیہ امام نے کہا ہے کہ اتفاقیہ شوبز کی دنیا میں وارد ہوئی اورجب مجھے پہلی ڈرامہ سیریل میں کاسٹ کیاگیا تو والد کی طرف سے اجازت نہ ملنے پر بھوک ہڑتال کردی تھی ،

تھیٹر دیکھنے کا شوق ہے اور جب بھی لاہور آتی ہوں تو اس کے لئے نسیم وکی کو ضرور فون کرتی ہوں۔

ایک انٹرویو میں سعد یہ امام نے کہا کہ میری مزاحمت سے مجبور ہوکر والد نے ٹی وی پر کام کرنے کی اجازت دی تھی اور میں نے ان سے وعدہ کیا تھا کہ میں تین ماہ میں اگر اپنا نا م نہ بناسکی تو شوبز چھوڑ دوں گی۔

خوش قسمتی سے میری پہلی ڈرامہ سیریل ہی اتنی مقبول ہوئی کہ میری شہرت پورے پاکستان میں پھیل گئی جس کے بعد مجھے گھر والوںکی بھرپور سپورٹ رہی مگر فلم میں کام کرنے کی پابندی برقرار رہی۔

انہوںنے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ مجھے اسٹیج ڈرامے دیکھنے کا بہت شو ق ہے اور میں جب بھی ٹی وی پراجیکٹ میں کام کرنے کے لئے لاہور آتی ہوں تو اسٹیج ڈرامہ ضرور دیکھتی ہوں اس کے لئے میں نسیم وکی کو فون کردیتی ہوں اور وہ مجھے ڈرامہ ہا ل میں بٹھا دیتے ہیں

اور میں نقاب پہن کر ہال میں ڈرامہ سے بھرپور لطف اندوز ہوتی ہوں۔ سعدیہ امام نے کہا کہ ڈرامہ انڈسٹری اب بام عروج پر ہے ، چینلز کی آمد نے ٹی وی فنکاروں کو خوشحالی کا راستہ دکھادیا ہے ، عام طور پر شوبز کی زیادہ تر لڑکیاں لومیرج کرتی ہیں لیکن میرا نہ تو کوئی ایسا ارادہ تھا اور نہ خواہش ، والدین کی پسند سے شادی کی اورآج خوش و خرم زندگی گزار رہی ہوںجبکہ ایک چاند سی بیٹی ہماری کل کائنات ہے ،

مزید پڑھئیے‎ : لالی ووڈ میں ٹیلنٹ کا نہیں‌رہا فقدان:ماھرہ خان

ٹی وی ڈراموں کے ساتھ ساتھ فلموں میں بھی کام کرنے کی آفرز مل رہی ہیں لیکن فی الحال ٹی وی شوز کرنے میں دلچسپی ہے۔ انہوں نے کہاکہ اداکارہ کی حیثیت سے زیادہ اب پروڈیوسر کے طور پر کام کرنے کی خواہشمند ہوں جس کی منصوبہ بندی جاری ہے۔

سعدیہ امام نے کہا کہ ٹی وی فنکاروں نے فلم انڈسٹری کو نئی زندگی دی جو بڑی کامیابی ہے ،ذاتی طور پر فلموں میں کام کرنے کا ارادہ نہیں لیکن اچھا کردار کسی بھی فنکار کو کام کرنے پر مجبور کردیتا ہے اسی لئے ابھی کچھ کہنا قبل ازوقت ہوگا۔دوسری جانب اداکارہ سعدیہ امام نے اپنی شاعری کو کتابی شکل دینے کیلئے تیاریاں کررہی ہیں۔

اس حوالے سے ان کا کہنا ہے کہ میں نے اس سے قبل بھی شاعری کی اور میری شاعری میں استاد نصرت فتح علی خاں نے گانا بھی گایا جو بھارتی فلم میں شامل کیا گیا۔ سعدیہ نے کہا کہ بچپن سے ہی شاعری کا شوق ہے‘ایک مرتبہ جون ایلیا کے سامنے شعر کہا جس پر انہوں نے ایک روپیہ انعام دیا جو آج بھی میرے پاس محفوظ ہے۔

اداکارہ نے کہا کہ اب سنجیدگی کے ساتھ اپنی شاعری کو کتاب کی شکل دینے کا فیصلہ کیا ہے اور ا س پر کام بھی شروع کر دیاہے تاہم ابھی تک کتاب کا نام نہیں سوچا۔

(280 بار دیکھا گیا)

تبصرے