Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
منگل 12 نومبر 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

زرداری کے خلاف نئے مقدمات کی تیاری

قومی نیوز پیر 07 جنوری 2019
زرداری کے خلاف نئے مقدمات  کی تیاری

کراچی …. سابق صدر اور پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین آصف زرداری اور فریال تالپور منی لانڈرنگ کیس میں کراچی میں بینکنگ کورٹ میں پیش ہوئے.

عدالت کے باہر پولیس و رینجرز کی بھاری نفری تعینات تھی۔ پیپلزپارٹی کے رہنما اور سیکڑوں کارکن بھی موجود تھے ،جو پی پی کے حق میں نعرے بازی کررہے تھے۔

بینکنگ کورٹ نے سابق صدر اور ان کی بہن کی عبوری ضمانت میں 23جنوری تک توسیع کرتے ہوئے کیس کی سماعت بھی 23جنوری تک ملتوی کردی۔

دوسری طرف ایف آئی اے میں حوالہ ہنڈی کی کارروائیوں کی تحقیقات میں سابق صدر آصف زرداری گروپ اور اومنی گروپ سمیت دیگر کے خلاف نئے مقدمات کی تیاریاں شروع کردی گئی ہیں۔

مزید پڑھئیے‎ : زرداری حکومت گرانے کیلئے سرگرم،جوڑ توڑ شروع

وفاقی حکومت کی نئی حکمت عملی کے تحت ایک کروڑ سے زائد رقم غیر قانونی طریقے سے منتقل کرنے والے مقدمات کی زد میں آئیں گے

حوالہ ہنڈی کی حالیہ کارروائیوں میں گرفتار اہم ملزم شکیل جعفرانی سے تحقیقات کے بعد ایف آئی اے میں زرداری گروپ، اومنی گروپ سمیت دیگر کے خلاف 70نئی انکوائریاں شروع کردی گئی ہیں

انکوائریوں کی زد میں انور مجید کی اہلیہ اور ان کی دو بہوئیں بھی آگئیں وفاقی حکومت نے حوالہ ہنڈی کے خلاف کارروائیوں میں نئی ایس او پی تشکیل دی ہے

حوالہ ہنڈی کے کاروبار میں ملوث افراد کے خلاف تحقیقات میں ایک کروڑ سے زائدکا زرمبادلہ غیر قانونی طریقے سے منتقل کرنے والے اور جس کی رقم منتقل کی گئی ہے، دونوں ایک ہی مقدمے میں نامزد ہوں گے اور دونوں کے خلاف کارروائی ہوگی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ جعلی اور بے نامی اکاؤنٹس کی تحقیقات میں قائم جے آئی ٹی کی رپورٹ میں ملزم شکیل جعفرانی پر الزام ہے کہ اس نے سابق صدر آصف زررداری کے فرنٹ میں یونس قدوائی اور اس کے بھائی عبدالجبار قدوائی کے لیے خطیر رقم کینیڈا منتقل کی۔

ایف آئی اے ذرائع کا کہنا ہے کہ شکیل جعفرانی سے تحقیقات کے نتیجے میں ایف آئی اے میں 70نئی انکوائریوں پر تحقیقات شروع کی گئی ہے ۔

ان کمپنیوں میں زرداری گروپ اور اومنی گروپ سے منسلکی ایسی بے نام کمپنیوں کی رقوم بھی غیر قانونی طریقے سے منتقل کی گئیں ، ان کمپنیوں کے مالکان اور ڈائریکٹرز میں شامل تمام افراد کے خلاف مقدمات درج کیے جائٰیں گے۔

(265 بار دیکھا گیا)

تبصرے