Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 19  اگست 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

حیدرآباد ٹریفک جام تجاوزات کیخلاف مہم بھی نا کام

محسن خان اتوار 23 دسمبر 2018
حیدرآباد ٹریفک جام تجاوزات کیخلاف مہم بھی نا کام

حیدرآباد۔۔۔۔حیدرآباد میں دعوؤں کے ساتھ تجاوزاتکے خاتمے اور ٹریفک آگاہی کی شروع کی جانے والی مہم ایک جانب بری طرح ناکام تو دوسری جانب ٹریفک پولیس سمیت اینٹی انکروچمینٹ سیل کے افسرانوں کیلئے کمائی کاذریعہ بن گئی شہریوں کوشدید اذیت اور مشکلات کا سامنا تفصیلات کے مطابق گذشتہ ماہ حیدرآباد اور لطیف آباد میں پولیس افسران کے بلند و بانگ دعوؤں اور بینڈ باجوں کے ساتھ ٹریفک قوانین پر عملدرآمد کرانیسمیت ٹریفک کی روانی رکھنے کیحوالے سے بھرپور مہم کاآغاز کرتے ہوئے تقاریب منعقد کی گئیں اور ٹوٹو سیشن کرائے گئے جس کیلئے سرکار کی بھاری رقم بھی خرچ ہوء لیکن حسب روایت مزکورہ مہم ٹریفک افسران کیلئے کماء کا ذریعہ بن گئی ہے حیدرآباد ٹریفک کے سیکشن افسران کی مجرمانہ غفلت اور ملی بھگت سے شہر کے متعدد علاقوں کوہ نور چوک.ریشم گلی.لجپت روڈ.سول ہسپتال.مارکیٹ.ٹاور.ہیرآباد.چاندنی چوک.موبائل مارکیٹ. ریڈیو پاکستان چوک. تلک چاڑی. سینٹ بونا ونچر چوک. چھوٹکی گٹی. قاضی قیوم روڈ. پریس کلب. گول بلڈنگ. حیدر چوک. اسٹیشن روڈ. نیا پل. سبزی منڈی. بدین اسٹاپ. فتح چوک. آٹو بھان روڈ. گدو چوک. گل سینٹر. و دیگر میں غیر قانونی پارکنگ مافیا کی پشت پناہی کے ساتھ شہر کی تمام سڑکوں پر غیرقانونی دوطرفہ ٹریفک چلنے کے عمل کو کنٹرول نہ کرنے کے باعث گھنٹوں گھنٹوں ٹریفک جام ہونے سے ایک جانب شہریوں کو سخت مشکلات اور اذیت کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے تو دوسری جانب ایمر جنسی میں ہسپتالوں کو منتقل کئے جانے والے مریضوں کیلئے ایمبولینسوں تک کو راستوں کی فراہم ممکن نہیں ہوپاتی جبکہ دوسری جانب حیدرآباد سمیت لطیف آباد میں تجاوزات کے خاتمے کیلئے سپریم کورٹ آف پاکستان کے حکم پر دعوؤں کے ساتھ شروع کی مہم بھی بری طرح ناکام ہوگئی ہے زرائع کے مطابق لیکن اسکی آڑ میں مارکیٹوں کے باہر فٹ پاتھوں سمیت سڑکوں پر پتھاریداروں اور پارگنگ مافیا کو کھلی چھوٹ دیکر بھاری نذرانے وصول کئے جارہے ہیں جسکے باعث شہر میں ٹریفک کا نظام درہم برہم ہوگیا ہے لیکن اس تمام صورتحال سے بخوبی آگاہ ہونے کے باوجود پولیس اور بلدیہ اعلیٰ حیدرآباد کے متعلقہ افسران خواب خرگوش کے مزے لے رہے ہیں حیدرآباد کے عوام اور سماجی حلقوں نے ڈی آئی جی حیدرآباد سمیت ایس ایس پی اور متعلقہ اداروں سے سخت نوٹس لیکر علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے فوری اقدامات کا پرزور مطالبہ کیا ہے.

(224 بار دیکھا گیا)

تبصرے