Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
پیر 22 جولائی 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

جانتی سب ہوں کسی خبر سے نہیں انجان

عاصم رحمانی هفته 17 نومبر 2018
جانتی سب ہوں کسی خبر سے نہیں انجان

پاکستان کی معروف اداکارہ جاناں ملک نے ہیرا سٹائلنگ کاکورس کرلیا۔بتایاگیاہے کہ انہوں نے ڈرامہ سیریل پارلروالی لڑکی کی تکمیل کے بعدکورس کیاہے۔اس حوالے سے جاناں ملک کا کہنا ہے کہ میں ہمیشہ روٹین سے مختلف کام کرنے کی کوشش کرتی ہوں کیونکہ زندگی میں ہر طرح کا چیلنج اچھا لگتا ہے اور ابھی میں نے بہت کچھ کرنا ہے۔ جاناں ملک نے کہا ہے کہ خوش مزاج ہوں اور اس طرح کے لو گ مجھے بے حد پسند ہیں وقت کی قدر کرتی ہوں کیونکہ گیا وقت کبھی دوبارہ لوٹ کر نہیں آتا۔ اداکارہ نے کہا کہ خوش اخلاقی آپ کی شخصیت میں خوبصورت اضافے کا سبب بنتی ہے ، خوش مزاج شخص کی ہر جگہ تعریف ہی ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں خود بھی خوش مزاج ہوں اور مجھے اس طرح کے لوگ بہت پسند ہیں اور میری اسی طرح کے لوگوں سے دوستی ہے۔ جانا ں ملک نے کہا کہ وقت کا ضیاع نہیں کرتی بلکہ زیادہ سے زیادہ محنت کرنے کی کوشش کرتی ہوں۔ اداکارہ نے کہاکہ فضول چیزوں سے دور رہتی ہوں، ادبی کتابوں سے خصوصی لگائو کے باعث فارغ اوقات میں کتابوں میں غرق ہوجاتی ہوں ،مجھے ادب اور سفر نامہ پڑھنے کا بہت شوق ہے جس کی وجہ سے انٹرنیٹ اورسوشل میڈیا سے دور بھاگتی ہوں۔ انہوں نے کہا کہ روزانہ ورزش میرا بہترین مشغلہ ہے ،سادہ غذا اور وقت پر سونے کی عادی ہوں خواہش ہے کہ ایسا کردار ادر کروں جس سے لوگ مجھے مدتوں یاد رکھے۔ جاناں ملک نے کہا ہے کہ بحیثیت مسلمان تہواروں پر صرف اپنی خوشیوں کا انتظام کرنے کی بجائے اپنے اردگرد بھی نظر یں دوڑانے چاہئیں‘ اپنی استطاعت کے مطابق لوگوں کی مدد کرکے دلی خوشی محسوس کرتی ہوں۔ جاناں ملک نے کہا کہ اسلام ایسا مذہب ہے جس میں آسانیاں ہی آسانیاں اور دوسروں کا خیال رکھنے کا درس دیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میری صاحب ثروت افراد سے اپیل ہے کہ وہ صرف اپنی خوشیوں کا انتظام کرنے کی بجائے اپنے اردگر موجود لوگوں کے لئے بھی ضرور کچھ وقف کریں۔یاد رہے کہ جاناں ملک ایک پاکستانی اداکارہ اور ماڈل ہیں۔ وہ پاکستان کے مختلف چینلوں کے کئی ڈراموں میں کردار ادا کیا ہے۔ وہ کئی فلموں میں بھی نمودار ہوئی ہیں 1998ء کی محافظ۔ حال ہی میں ان کے ڈرامے ’’مر جائیں بھی تو کیا‘‘ اور’’ ایک تمنا لاحاصل سی‘‘ اور’’اعتراف‘‘پیش کئے گئے۔

(226 بار دیکھا گیا)

تبصرے