Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
جمعرات 26 نومبر 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

کراچی کے شہریوں کے ساتھ دھوکہ

developer account جمعه 20 نومبر 2020
کراچی کے شہریوں کے ساتھ دھوکہ

کراچی(نمائندہ قومی اخبار) کراچی کے شہریوں اور سیاسی حلقوں نے کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کو کراچی کے شہریوں کے ساتھ دھوکہ قرار دیتے دینے کے ساتھ توہین عدالت سے بچنے کی کوششیں قرار دے دیاہے ‘ خصوصاً کراچی سرکلر ریلوے کیلئے تیار کردہ خصوصی کوچز کونئے روٹ پر چلانے کے بجائے پرانے روٹ پپری اور کراچی سٹی اسٹیشن کے مابین ریلوے کے مین ٹریک پر چلانے سے کراچی کے شہریوں کو مایوسی ہوئی ہے اور اس کے نتیجے میں کراچی میں ٹرانسپورٹ کی سہولتوں میں اضافہ کا جو خواب دیکھا جارہا تھا وہ چکنا چور ہوگیاہے ‘ واضح رہے کہ چندماہ قبل اسی روٹ پر چلائے جانے والی دھابے جی ایکسپریس صرف 9 روز بعد خسارے کی وجہ سے بند کردی گئی تھی۔ سپریم کورٹ نے ماہ مارچ میں کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کیلئے 6 ماہ کی مہلت دی تھی۔ لیکن 9 ماہ بعد بھی ریلوے حکام نے کے سی آر کی بحالی کیلئے نئے روٹ کی تیاری کیلئے ایک کلومیٹر کا ریلوے ٹریک بھی نہیں بنایا۔جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمن نے بھی کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی کو مستر دکرتے ہوئے کہا ہے کہ سرکلر ریلوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ سرکلر ریلوے کو اس کے اصل روٹ ڈرگ اسٹیشن ‘ گلشن اقبال’ لیاقت آباد’ ناظم آباد’ اورنگی ٹائون اسٹیشن سے چلایاجائے اور راستے میں آنے والے تمام اسٹیشنوں کی مرمت کرائی جائے ۔ ٹکٹ گھر بحا ل کئے جائیں اور لوکل ٹرین کے بجائے سرکلر ریلوے چلائی جائے انہوںنے کہا کہ وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید نے سرکلر ریلوے نہیں ۔ بلکہ لوکل ٹرین چلائی ہے ۔ اس روٹ کا افتتاح نعمت اللہ خان نے اپنے دور میں 2005 ء میں کیا تھا۔ انہوںنے کہا کہ صرف سپریم کورٹ کو متاثر کرنے کیلئے لوکل ٹرین کا آغاز کیا جارہاہے ۔
کراچی سرکلرریلوے

(24 بار دیکھا گیا)

تبصرے