Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
منگل 22  ستمبر 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

بھارت کی چینی فوجیوں پر فائرنگ،حالات کشیدہ

ویب ڈیسک بدھ 09  ستمبر 2020
بھارت کی چینی فوجیوں پر فائرنگ،حالات کشیدہ

چین کی جانب سے کسی بھی اگلے حملے اور فائرنگ کے نتیجے میں جوابی کارروائی کا عندیہ بھی دے دیا گیا
لداخ (قومی اخبارنیوز)بھارت کی جانب سے متنازعہ علاقے لداخ میں چین کی سرحد کے قریب فوجیوں کو فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا، تاہم حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ واقعہ کے بعد دونوں ممالک کے درمیان حالات پھر کشیدہ ہوگئے۔خبر رساں ایجنسی کے مطابق چین کی فوجی ترجمان کا کہنا ہے کہ بھارتی فورسز نے پینگ گانگ جھیل کے علاقے میں چینی فوجیوں پر فائرنگ کی جس کا مطلب جنگ کیلئے اکسانا ہے۔چین کے بلااشتعال حملے اور فائرنگ کے بعد چین کی جانب سے بھی فوج کو سرحد کے مزید قریب تعینات کردیا گیا ہے، جب کہ کسی بھی اگلے حملے اور فائرنگ کے نتیجے میں جوابی کارروائی کا عندیہ بھی دے دیا گیا ہے۔چین کی فوج کے ترجمان نے کہا ہے کہ بھارتی فوجیوں نے ایک بار پھر ایل اے سی غیر قانونی طور پر عبور کی اور چینی سرحد پر گشت کرنے والے فوجیوں پر فائرنگ کی۔ چینی فوج نے صورت حال کو کنٹرول کرنے کے لیے جوابی کارروائی کی، ترجمان نے مزید کہا کہ بھارت صورتحال کو پیچیدہ نہ بنائے۔بھارت کی جانب سے چین کے پہاڑوں علاقوں میں تعینات چینی فوجیوں کو فائرنگ سے نشانہ بنایا گیا۔ چینی فوج کا کہنا ہے کہ بھارت کی جانب سے ایسے حملے کرکے سنگین غلطی کی گئی ہے۔دوسری جانب چوری اور سینہ زوری کے مترادف بھارت نے الٹا چین پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے بھارتی علاقے پر چین نے دراندازی کی اور سرحدی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے۔واضح رہے کہ بھارتی فوجیوں کی جانب سے چین کے ساتھ سرحد پر متعدد بار چھیڑ چھاڑ کی کوشش کی گئی ہے، چین نے تحمل سے کام لیتے ہوئے مسئلہ مذاکرات سے حل کرنے پر زور دیا ہے۔دونوں ممالک کے درمیان سرحدی کشیدگی اور دراندازی کا سلسلہ رواں سال مئی جون میں شروع ہوا۔ بھارت کی جانب سے متواتر حملوں اور سرحدی خلاف ورزی پر 15 جون کو شدید تصادم کے نتیجے میں بھارت کو اپنے 15 فوجیوں کی جانوں سے ہاتھ دھونا پڑے۔بھارت نے اپنے فوجی مرنے پر خوب واویلا کیا تاہم چین کے عالمی قوانین کے مطابق ردعمل نے بھارت کو خاموش کروا دیا۔ اس مرتبہ پھر بھارت نے سرحدی خلاف ورزی کرتے ہوئے چینی فوجیوں پر فائرنگ کی ہے جس کا چین نے پہلے کی طرح مدبرانہ طرز عمل اپناتے ہوئے کسی جنگی کارروائی کی بجائے بھارتی کارروائی کو اکسانے کا اقدام قرار دیا ہے۔ہمالیہ کے بارڈر پر متنازعہ سرحدی علاقے لداخ پر دونوں جانب سے چین اور بھارت کے کئی ہزار فوج تعینات ہیں۔ یہ علاقہ سطح آب سے 13 ہزار 500 فٹ کی بلندی پر واقع ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان اس سے قبل سال 1962 میں مختصر جنگ بھی ہوچکی ہے۔

(39 بار دیکھا گیا)

تبصرے