Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
منگل 22  ستمبر 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

وزیراعظم کو بتادیا کراچی ایسے نہیں چلے گا، گورنر سندھ

ویب ڈیسک جمعه 31 جولائی 2020
وزیراعظم کو بتادیا کراچی ایسے نہیں چلے گا،  گورنر سندھ

کراچی (اسٹاف رپورٹر)گورنر سندھ عمران اسماعیل کا کہنا ہے کہ افسوس کی بات ہے کراچی کو ہمیشہ نظر انداز کیا جاتا ہے، جبکہ کراچی کو ٹھیک کرنے کے لئے ایک دوسرے کو الزام دیا جاتا ہے۔گورنر سندھ نے میئر کراچی وسیم اختر کے ساتھ کراچی میں مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ کراچی میں بلیم گیم ہے کوئی حل نہیں دے رہا، وزیر اعظم کو کہا ہے کہ کراچی اس طرح نہیں چل سکتا۔گورنر سندھ نے کہا کہ وزیر اعظم کی ہدایت پر این ڈی ایم اے اور ایف ڈبلیو او حکام کراچی آئے، جبکہ وفاق کی توجہ اب سو فیصد کراچی پر مرکوز ہوگئی ہے۔عمران اسماعیل نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان کراچی کے حوالے سے بہت زیادہ فکر مند ہیں وہ چاہتے ہیں کہ پاکستان کا معاشی مرکز ایک بین الاقوامی شہر کے طور پر اْبھرے اور دوبارہ سے روشنیوں کا شہر کہلائے۔ اس ضمن میں انہوں نے آج ایک سمری پر دستخط کئے ہیں جس کے تحت پاکستان آرمی، این ڈی ایم اے اور فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن کراچی میں بارش اور کچرے کے حوالے سے پیدا ہونے والے مسائل کے لئے ایک جامع حکمت عملی تیار کرکے قلیل المدتی اور طویل المدتی اقدامات تجویز کریں گے اور ان پر انہی اداروں کے ذریعے عمل درآمد کیا جائے گا جس کے لئے حکومت سندھ سے بھی تعاون کی امید ہے کیونکہ یہ شہر ہم سب کا ہے اور وزیراعظم کے اس اقدام کا مقصد کراچی کے شہریوں کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سمری کے تحت کراچی کی صفائی کا کام فوری شروع ہو جائے گا، کراچی میں بند نالوں کو کھولنے کا کام فوری شروع کیا جائے گا اور نالوں سے نکلنے والا گند مناسب جگہ ٹھکانے لگایا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ہمیں ایک دوسرے پر الزامات لگانے کے بجائے مشترکہ طور پر اس شہر کے مسائل کو جلد از جلد حل کرنے کے لئے اقدامات کرنے چاہئیں۔ گورنر سندھ نے کہا کہ شہر کے لئے تین مرحلوں میں کام کیا جائے گا۔ پہلے مرحلہ میں نالوں سے نکالے گئے فضلہ کو لینڈ فل سائٹس تک پہنچایا جائے گا، دوسرے مرحلہ میں جو نالے بند ہیں انہیں کھولا جائے گا جبکہ تیسرے مرحلہ میں شہر میں جراثیم کش اسپرے کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کراچی والوں کے لئے یہ اچھی خبر ہے کہ اس ضمن میں فنڈنگ کا کوئی مسئلہ نہیں ہوگا اور وزیراعظم چاہتے ہیں کہ یہ کام ہر حال میں مکمل ہو۔گورنر سندھ نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کو بھی اجلاس کے لئے دعوت دی تھی، ہم سندھ حکومت سے ملکر کام کریں گے۔انہوں نے کہا کہ کراچی میں بارشوں کے دوران بلدیاتی نظام فیل ہو گیا، کراچی میں بارش میں گاڑیاں اور لوگ بہہ گئے، جبکہ شہر میں جو لوگوں پر گزری ہے اس کا ہم اندازہ بھی نہیں لگا سکتے۔گورنر سندھ نے کہا کہ کراچی میں نالوں پر جو تعمیرات ہیں انہیں دوسری جگہوں پر آباد کیا جانا چاہیے۔ میئر وسیم اختر نے کہا کہ کراچی کے تمام مسائل کا حل آرٹیکل 140 اے میں چھپا ہوا ہے، انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم آئین پر عمل در آمد کرائیں۔وسیم اختر نے کہا کہ کراچی کے منتخب لوگوں کو اختیارات اور وسائل ملنا چاہئیں۔۔ انہوں نے کہا کہ شہر قائد میں تمام زبانیں بولنے والے رہتے ہیں اسے منی پاکستان کا درجہ حاصل ہے ہم اسے دوبارہ سے عروس البلاد بنانا چاہتے ہیں جہاں کچرے اور گندگی کے ڈھیر نہ ہوں بلکہ یہ ایک بین الاقوامی طرز کا شہر دکھائی دے، اس کے لئے ہم تمام اسٹیک ہولڈرزکے ساتھ تعاون کی کسی بھی حد تک جانے کے لئے تیار ہیں۔

(286 بار دیکھا گیا)

تبصرے