Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
هفته 04 جولائی 2020
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

عمران خان خود میدان میں آگئے

ویب ڈیسک پیر 29 جون 2020
عمران خان خود میدان میں آگئے

کراچی(رپورٹO صابرعلی)وزیر اعظم عمران خان نئے سال کا بجٹ منظور کرنے کیلئے از خود میدان میں نکل آئے اور تمام اتحادیوں کو الگ الگ ملاقات کیلئے ملانے کے ساتھ ساتھ تمام اراکین کے اعزاز میں عشائیہ دیا۔ تاہم حکومت کو سب سے بڑی اتحادی جماعت مسلم لیگ (ق) نے وزیر اعظم کے عشائیہ کی دعوت کو مسترد کرتے ہوئے پیغام دیا کہ ہم نے بجٹ پاس کرانے کیلئے ووٹ دینے کا وعدہ کیا ہے‘ ووٹ دے دیں گے‘ لیکن وزیر اعظم کی کھانے کی دعوت مسترد کرتے ہیں‘ جبکہ بی این پی مینگل جوپہلے ہی حکومتی اتحاد سے الگ ہوچکی ہے‘ عشائیہ میں شرکت سے انکار کردیا ہے‘ وفاقی وزیر ریلوے جو مین پارٹی کے سربراہ ہونے کے ساتھ وزیر اعظم عمران خان کے قریبی دوست بھی ہیں۔ انہوں نے بھی بیماری کا بہانہ بنا کر وزیر اعظم کے عشائیہ میں شرکت سے معذرت کرلی ہے‘ دوسری جانب اپوزیشن کی چار بڑی جماعتوں نے مشترکہ پریس کانفرنس کے ذریعے وفاقی بجٹ کو مسترد کرنے کا اعلان کردیا پیپلزپارٹی کے بلاول بھٹو‘ مسلم لیگ (ن) کے خواجہ آصف‘ جماعت اسلامی کے میاں اسلم اور جے یو آئی (ف) کے اکرم درانی نے آج قومی اسمبلی کے اجلاس میں بجٹ پاس کرنے میں اپنا ووٹ دینے سے انکار کردیا‘ ذرائع کے مطابق پنجاب خصوصاً جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے پی ٹی آئی کے 25 سے 30 ارکان قومی اسمبلی بھی جو وزیر اعظم سے ناراض ہیں۔ بجٹ پاس کرنے کے خلاف اپنا ووٹ دیں گے‘ وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کا روز انتہائی مصروف گزارا‘ ایم کیوایم (پاکستان) جی ڈی اے اور بلوچستان جمہوری پارٹی کے وفود سے ملاقاتیں کرکے ان کے تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کراتے ہوئے بجٹ کی منظوری میں ووٹ دینے کی یقین دہانی حاصل کی۔

اسلام آباد(بیورورپورٹ) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ حکومت سنبھالی تو ملک چلانے کے لیے پیسے نہیں تھے اور معیشت بہتر ہوئی تو کورونا وائرس آگیا لیکن شدید مالی مشکلات کے باوجود ٹیکس فری بجٹ دیا۔حکومتی و اتحادی ارکان پارلیمنٹ کے اعزاز میں عشائیے سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ مشکل ترین حالات میں مجبورا مشکل فیصلے کرنا پڑتے ہیں۔ رواں سال کا بجٹ مشکل ترین مالی حالات میں پیش ہوا۔انہوں نے کہا کہ بجٹ اجلاس میں تمام ارکان کی حاضری ضروری ہے۔ ارکان پارلیمنٹ کے مسائل سے واقف ہوں۔ کورونا صورت حال کے پیش نظر ارکان اسمبلی سے ملاقاتیں کم ہوئیں۔ حکومت تمام اتحادی جماعتوں کو ساتھ لیکر چلے گی۔عمران خان نے کہا کہ تحریک انصاف جمہوری پارٹی ہے سب کو اظہاررائے کی آزادی ہے۔ پارٹی میں کوئی اختلافات نہیں سب متحد ہیں۔ تمام پی ٹی آئی اور اتحادی ارکان سے ملاقاتوں کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔وزیر اعظم نے کہا کہ کورونا وبا کی روک تھام کے لیے حکومت نے موثر حکمت عملی اپنائی۔ کورونا وبا کی صورت حال میں پہلے دن سے لاک ڈاون کے خلاف تھا۔ اس بحران سے مقابلے لیے سمارٹ لاک ڈاون کی طرف گئے۔ آج دنیا لاک ڈاون کی بجائے سمارٹ لاک ڈاون کی طرف جا رہی ہے۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے ارکان اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز فراہم کرنے کی یقین دہانی کروادی ہے۔ واضح رہے وزیر اعظم نے ا?ج بجٹ کی منظوری اور سیاسی صورت حال پر اعتماد میں لینے کے لیے حکومتی اراکین اور اتحادیوں کے اعزاز میں عشایہ دیا تھا۔قبل ازیں وزیراعظم عمران خان سے متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے وفد نے ملاقات کی ہے۔ایم کیو ایم وفد کی قیادت پارٹی کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کی، دیگر میں کشور زہرہ، صابر حسین قائمخانی، صلاح الدین، اسامہ قادری، وفاقی وزیر امین الحق اوراقبال محمد علی خان شامل تھے۔ذرائع کیمطابق ملاقات کے وقت وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی،وزیر دفاع پرویز خٹک،اسد عمر،شفقت محمود،ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری و دیگر بھی موجود تھے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم کے روبرو ایم کیو ایم وفد نے کراچی کے مسائل اور قومی ایشوز پر پر اپنا موقف پیش کیا۔ذرائع کیمطابق ایم کیو ایم کی قیادت نے پٹرول کی قیمتوں میں حالیہ اضافے اور کراچی کے ترقیاتی منصوبوں کا معاملہ بھی اٹھایا۔ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم قیادت نے ملاقات کید وران وزیراعظم کو بجٹ 2020-21 کیلیے حکومت کا بھرپور ساتھ دینیکی یقین دہانی کرائی۔

(319 بار دیکھا گیا)

تبصرے