Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
بدھ 13 نومبر 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

ایرانی ملکہ حسن کی فلپائن میں پناہ کی درخواست

ویب ڈیسک جمعرات 24 اکتوبر 2019
ایرانی ملکہ حسن کی فلپائن میں پناہ کی درخواست

لندن (قومی اخبار نیوز) ایران کی ملکہ حسن نے تہران میں زندگی کو خطرہ لاحق ہونے پر فلپائن میں پناہ کے حصول کی کوششیں شروع کر دی ہیں۔برطانوی خبر رساں ادارے ’’ڈیلی میل‘‘ کے مطابق بہارے زارع بہاری جنہوں نے 2018ء کے انٹرکونٹیننٹل مقابلہ حسن میں ایران کی نمائندگی کی تھی اس وقت فلپائن کے امیگریشن بیورو کی زیر حراست ہیں۔ گذشتہ ہفتے فلپائن کے شہر منیلا کے نینوئے اکینو ایئر پورٹ پر روکا گیا تھا۔امیگریشن بیورو کا کہنا ہے کہ انہیں انٹرپول کے ایک نوٹس کی وجہ سے فلپائن میں داخلے سے روکا گیا۔

مس یونیورس کا تاج فلپائن کی حسینہ کے سر پر

یہ نوٹس ایک ایرانی شہری کی جانب سے انکے خلاف حملے اور بیٹری سے متعلق کیس دائر کرنے کے بعد جاری کیا گیا تھا۔ تاہم بہاری نے ایسے کسی بھی غلط اور غیر قانونی کام میں ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔ان کا کہنا ہے کہ ان کے خلاف کیس جعلی ہے۔ ان کے مطابق حزب اختلاف کے ایک رہنما کی حمایت کرنے، مقابلہ حسن میں حصہ لے کر روایتی اقدار کی خلاف ورزی کرنے اور خواتین کے حقوق کے لیے بولنے پر ایران انہیں نشانہ بنا رہا ہے۔یاد رہے کہ جنوری میں منعقدہ مقابلے میں بہاری ایران کے اپوزیشن رہنما اور ایران کی نیشنل کونسل کے بانی رضا پہلوی کی تصویر اٹھائے سٹیج پر جلوہ گر ہوئی تھیں۔

عرب خبر رساں ادارے ’’عرب نیوز‘‘کو انٹرویو دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ چونکہ میں نے تصویر مقابلہ حسن میں استعمال کی تھی اس لیے وہ مجھ سے ناراض ہیں۔ اگر یہ (فلپائن) مجھے بے دخل کر دیں گے تو وہ (ایران) مجھے اگر قتل نہ بھی کریں تو کم سے کم 25 سال کے لیے جیل میں قید کر دیں گے۔بہاری نے بتایا کہ انہوں نے فلپائن جانے سے پہلے دبئی میں دو ہفتے کی چھٹیاں گزاریں جہاں انہیں امیگریشن حکام کے ساتھ کسی قسم کے مسئلے کا سامنا نہیں کرنا پڑا لیکن جب انہیں منیلا کے ایئر پورٹ پر روکا گیا اور بتایا گیا کہ ان کا نام انٹرپول لسٹ میں ہے تو انہیں بہت حیرانی ہوئی۔

انہوں نے بتایا کہ ان کے وکیل نے فلپائن اور انٹرپول کے تمام ریکارڈز کی جانچ پڑتال کی ہے لیکن ان کے خلاف کوئی ریکارڈ نہیں ہے۔ بہاری کو ایران واپس بھیجا جانا تھا تاہم ڈیپارٹمنٹ آف جسٹس کے ایک عہدیدار مارک بیریٹ کا کہنا ہے وہ بیورو حکام کی حراست میں ہی رہیں گی اور انہیں ایران واپس نہیں بھیجا جائے گا کیونکہ انہوں نے پناہ کی درخواست دے دی ہے۔

(1409 بار دیکھا گیا)

تبصرے