Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
هفته 24  اگست 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

حیدرآباد کی کرپشن کہانی

ویب ڈیسک جمعه 22 فروری 2019
حیدرآباد کی کرپشن کہانی

پا کستان کی ر یا ست کے بعض ادا رو ں کی کر پشن کھل کر سامنے آ رہی ہے بڑے بڑے اداروںکی کرپشن میں ملو ث افسران و افراد کو گرفتا ر کرنے کا عمل نیب کی جا نب سے جا ری ہے مر ی اسلام آ باد لا ہو ر ملتان خیر پور لا ڑ کا نہ نو ا بشاہ دا د و کراچی سمیت حیدر آباد میں بھی مختلف سر کاری اداروں لینڈ گر یبر لینڈ ڈیپار ٹمنٹ سمیت دیگر اداروں کی کرپشن کے خلاف نیب کی ٹیمیں حر کت میں آ گئی ہیں حیدر آباد بلد یہ کے زیلی کئی ادا رو ں محکمہ تعلیم محکمہ ور ک اینڈ سر و سز جبکہ ایر ی گیشن اور درجنو ں سر کاری ادا روں کی کر پشن کے ثبو ت ملنے کے بعد کر پشن ز دہ افسران و افراد کے خلاف کر اچی نیب کی ٹیم نے کا ر وائی کر نے کے سلسلے میں اپنی حکمت عملی طے کرلی ہے رو ا ں ما ہ کے پہلے مرحلے میں ہی کر اچی نیب ٹیم کی ،بلد یہ ا علیٰ حیدر آباد کے شعبہ لینڈ پر چھا پہ ما رکار رو ائی کو عملی جا مع پہنا نے کے لیے نیب ٹیم نے اہم فائلیں تحو یل میں لے لیں نیب قومی ا حتسا ب بیو روکر ا چی ٹیم نے لینڈ ڈیپارٹمنٹ پر چھا پے کے دو ران د فا تر میںمو جو د چھوٹے گر یڈ کے ملا ز مین سے افسران کی پو چھ گچھ کی جس پر ملا زمین کا کہنا تھا کہ وہ نیب کا رروائی کا انکے علم میں آتے ہی وہ را ہ فرار ا ختیا ر کر گئے ہیں ذ رائع نے بتا یا کہ نیب کارروائی سے قبل ہی لینڈ ڈ یپا ر ٹمنٹ کے کئی افسران و ملا زمین بھا گ کھڑ ے ہو ئے تھے اور جو بچے تھے اوروہ معصوم ملا زمین کاکر دار ادا کر تے دکھائی دیئے تھے‘ذ را ئع نے مز ید بتا یاکہ نیب ٹیم کراچی کی کارروائی کے دو ران الما ر یو ں کے،تالے کھو ل کر اور آ فسو ں میں ر یکا ر ڈ رو م میں مو جو د بعض فا ئلو ں کو عملے نے نیب کی ٹیم کو تحو یل میں لینے میں مد د کی ‘ذرا ئع نے یہ بھی بتا یاکہ نیب نے جن پلا ٹ کی فائلیں تحو یل میں لی ہیں‘ ان میں بیشتر ارا ضی پر کثیر المنز لہ عما ر تو ں پلا زا ئو ں ما ل اور کا ٹیجز‘ جبکہ بعض کا لجز کی انتظا میہ نے کا لجز کی تعمیر ات کر ا چکے ہیں قو می احتسا ب بیورو نے حیدر آباد با لخصوص مہنگے ترین علاقے آٹو بھان رو ڈ پر بھا ری میں رشو ت کے عوض سر کا ری ارا ضی ا لا ٹ کر ا نے اور ایمنسٹی ا سکیم کے نام پر غیر قا نو نی تعمیر ات کو ایمنسٹی ا سکیم کے ز ر یعے تحفظ دینے سے متعلقہ میگا کرپشن کی تحقیقا ت کا و سیع کر تے ہوئے حیدر آباد یونٹ نمبر8 میں وا قع لینڈ ڈیپارٹمنٹ کے د فتر پر چھاپہ ما را نیب ٹیم کے چھاپے کے دو ران ہی آفس کا بعض عملہ اور ا فسران بھا گ کھڑے ہو ئے تھے جبکہ چھا پے کے دو ران ڈا ئریکٹر لینڈ آفا ق ا حمد بھی مو جو د نہیں تھے تاہم پھر کیا تھا نیب کی ٹیم نے ڈا ئر یکٹر لینڈ آ ف آفا ق ا حمد کو فون کھـٹکٹھا یا اور طلب کیا آ فا ق ا حمد بھی اپنے آ فس ایسے پہنچے جیسے ہیڈ ما سٹر نے کسی طا لب علم کو ا سکے خلا ف شکا یت کرنے پر بلا یا ہو نیب کی ٹیم نے ڈائریکٹر معصوم صا حب سے اپنے ہمراہ لائے جا نے والی لسٹو ںکی معلومات کیں ڈائریکٹر لینڈ آ فاق ا حمد کو لسٹو ں کی تفصیلات کے حوالے سے ظا ہر کر دہ نیب کی معلو ما ت اکٹھا کر نے کا بتا تے ہوئے کہنا تھاکہ ایسے پلا ٹو ں کی تفصیلات شامل بتائی گئی ہیں جن میں بھا ری ر شو ت کے عیو ض پلا ٹ کے آ گے موجو دہ سر کاری اراضی بھی ا لا ٹ کر دی گئی ہے جو کہ کسی صو ر ت بھی ا لا ٹ نہیںکی جا سکتی ہے جبکہ فہر ست میں ایسے پلا ٹس کی فہرست بھی شامل تھی جو کہ غیر قا نو نی طر یقے سے رہائش سے کمر شل کر نے کے بعد و ہا ں نجی کا لجز پلازے تعمیر کر دیئے گئے ہیں اور کیا تھا ان کر پشن ز دہ افسران و افراد نے اپنی ہیر ا پھیری کے دو ران جو کیا وہ ز یر غو رہے کہ بھا ری ر شوت دے کے دی جانے والی ایمسنٹی ا سکیم میں تا ریخ گز رنے کے باوجو د انہیں شامل کر لیا گیا ہے،نیب ز را ئع نے بتایا کہ یونٹ نمبر دو اور یو نٹ نمبر تین جبکہ یونٹ نمبر آ ٹھ پر واقع یاایسے پلا ٹ کو بلد یہ اعلیٰ حیدر آباد کے شعبہ لینڈ کے بعض افسران نے لینڈ گر یبر ز سے مل کر بھاری رشوت کے عو ض ا لا ٹ کر د یئے ہیں مذ کو رہ پلاٹ کی تحقیقات کی جا رہی ہے اور گلی سٹر ک کے لیے مختص کی جا نے والی ارا ضی اور ایمسینٹی پلاٹ وغیر قانونی طورپر ا لا ٹ کر نے اور غیر قا نونی تعمیر ات کو ایمیسنٹی اسکیم کے نا م پر ریگولا ئز کر نے سے متعلقہ میگا کر پشن کے ا صل حقا ئق کو سامنے لا نے کی کوششو ں کو جا ری ر کھا ہو اہے‘ ذ رائع کے مطا بق حیدر آباد کے سر کاری افسران اور ملو ث افراد بلڈر ما فیا لینڈ گر لیبر ز اور متعلقہ کر پشن ز دہ سر پر ستو ںکے خلا ف بھی کارروائیاں کیے جانے کے و سیع ا مکانا ت متو قع ہیں قابل غور امر یہ ہے کہ نیب کی کار روائیو ں سے گھبر اکر مختلف سر کاری ادا رو ں کے معر و ف کر پشن ز دہ افسران نے خود کو بچا نے کی تیا ر یاں شر وع کر دی ہیں اور مختلف پارلمینٹر ین اور متعلقہ ڈا ئریکٹر و ں کی مد د حا صل کر لی ہیں‘ بہر حال کر پشن ز دہ چاہے افسران ہو یا افراد ان را شی افسران و افر اد کو کیفر کر دار تک پہنچا یا جا ئے تو ملک سے ا سی صو رت ہی کر پشن کا خا تمہ ممکن ہو سکے گا۔

(192 بار دیکھا گیا)

تبصرے