Qaumi Akhbar
Loading site
قومی اخبار
جمعه 13 دسمبر 2019
LZ_SITE_TITLE
 
New World of Online News

کبھی ٹینشن نہیں پالی رز کمالی

عاصم رحمانی هفته 29 دسمبر 2018
کبھی ٹینشن نہیں پالی رز کمالی

ماڈل واداکارہ رز کمالی نے کہا ہے کہ کردار چاہے ہی کیسا کیوں نہ ہو مجھے اسے پرفارم کرنا ہے کہ دیکھنے والے اسے قبول کرلیں۔ رزکمالی نے کہا کہ ہمارا ڈرامہ انڈیا میں بے حد مقبول ہے، وہاں کے انسٹیٹیوٹ میں ایکٹنگ کے طلبا وطالبات کو ہمارے ڈرامے دکھائے جاتے ہیں۔اسٹار پلس کی وجہ سے ہمارا ڈرامہ کہیں گم ہوگیا تھا ،مگر تین چار سالوں کے دوران ہماری ڈرامہ انڈسٹری نے تیزی سے ترقی کی ہے۔ جدید ٹیکنالوجی سے جہاں جدت آئی وہیں پر ڈرامہ کا فارمیٹ بھی تبدیل ہواہے۔ اس کو ٹی وی ناظرین پسند بھی کر رہے ہیں ،مگر اس وقت سب سے زیادہ ضرورت کانٹنٹ پر فوکس کیا جائے۔اداکارہ کا کہنا تھا کہ بھارتی ڈراموں پر پابندی کے بعد ترکش سمیت دیگر ممالک کے ڈرامہ اردو زبان میں ڈب دکھائے جارہے ہیں وہیں پر ہمارے رائٹرز، ڈائریکٹرز اورفنکاروں کی مصروفیت میںبھی اضافہ ہوا۔اب رائٹرز بیک وقت دو سے تین ڈراموں کا اسکرپٹ لکھ رہا ہوگا تو ان کے کردار اور کہانی کہیں نہ کہیں یکسانیت کا شکار ہوگی۔ اسی لیے اچھا اور برا دونوں قسم کا ہی کام ہورہا ہے۔ ان میں جس پراجیکٹ کی کہانی اور کرداروں کے مطابق فنکاروں کو کاسٹ کیا ہوگا تو اسے پذیرائی بھی مل رہی ہے۔ رزکمالی نے کہا کہ میں سمجھتی ہوں کہ کردار چاہے ہی کیسا کیوں نہ ہو مجھے اسے پرفارم کرنا ہے کہ دیکھنے والے اسے قبول کرلیں۔کراچی اور لاہور میں بننے والی ڈرامہ سیریلز میں منفرد نوعیت کے کردار کر رہی ہوں۔پچھلے ایک ماہ سے لاہور میں دو ٹی وی ڈرامہ سیریلز کے علاوہ ملٹی نیشنل کمپنی کے پروگرام کر رہی ہوں۔فلم کے سوال پر ان کا کہنا تھا کہ مجھے پانچ سے سات فلمیں آفر ہوئیں جن میں سے دو ایسے پراجیکٹس تھے جنھیں انکار کرنے کا افسوس ہوا۔اداکارہ نے کہا کہ میرا مشورہ ہے کہ جو موقع ملے اسے حاصل کرنے کے لیے اپنی پوری طاقت لگا دو۔ کوئی رول بڑا یا چھوٹا نہیں ہوتا۔ آپ خود اسے چھوٹا یا بڑا بناتے ہو۔ نوجوانوں کو اپنی صلاحیتوں کو نکھارنے کی ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے۔ ا

(345 بار دیکھا گیا)

تبصرے